جمعه , اکتبر 20 2017
مرکزی صفحہ / ڈاکٹر شاہد مسعود کے سوالات کے جوابات / اہلِ تشیع میں ولایت فقیه سے کیا مراد ہے؟
wilayat faqhi

اہلِ تشیع میں ولایت فقیه سے کیا مراد ہے؟

اسلامی ثقافت میں، معاشرہ کے لیے سربراہ کے ہونے کی ضرورت کے پیش نظر ، کوئی شخص بذات خود اس قسم کے امر کا حق نہیں رکھ سکتا ہے، یہ اختیار اور حق صرف خداوندمتعال کو ہے کہ انسان سے متعلق سب کچھ اسی کے ہاتھ میں ہے اور یہی چیز اقتضا کرتی ہے کہ انسان کو خداوندمتعال کے اوامر و نواہی کا مطیع و فرمانبردار ہونا چاہئیے، اب اگر خداوندمتعال ہی ہم کو کسی خاص شخص یا گروہ کی اطاعت کرنے کا حکم دے اور پیشوائی اور قیادت کے لیے کچھ شرائط بیان کرے اور اس قسم کی شرائط کے مالک افراد میں سے کسی شخص کو معین کرنے کی ذمہ داری ہم پر ڈالے، تو اس صورت میں بھی ہم خدا کے ہی اطاعت کرنے والے ہوں گے۔ مسلمانوں کا ماضی سے حال تک اعتقاد رہا ہے کہ خداوندمتعال نے قیادت کی باگ ڈور رسول اکرم{ص} کو سونپی ہے اور اس کے بعد، اہل بیت {ع} کے پیرووں کے اعتقاد کے مطابق یہ ذمہ داری معصوم اماموں میں منتقل ہوئی ہے۔ ” شیعوں کے اعتقاد کے مطابق، عصر غیبت میں، ولایت فقیہ ، معصوم اماموں[ع} کی ولایت کی ایک کڑی ہے، جس طرح ان کی ولایت نبی اکرم{ص} کی ولایت کی کڑی ہے اور اس کا نتیجہ یہ نکتہ ہے کہ اسلامی معاشرہ کی سرپرستی اور اعلیٰ درجہ کی قیادت ایک اسلام شناس کے ہاتھ میں ہونی چاہئیے اگر معصوم حاضر ہو تو یہ ذمہ داری خود اسی پر ہوگی اور اگر حاضر نہ ہو تو یہ ذمہ داری فقہا پر ہوگی ۔

اس سلسلہ میں اکثر فقہا کی نظر میں ، حکومتی مسائل میں، فقیہ کو وہی اختیارات ہیں، جو معصوم کو ہوتے ہیں۔ البتہ متاخر فقہا میں سے بعض ولایت فقیہ کے اختیارات کو محدود تر جانتے ہیں اور ان اختیارات کے دائرے میں تمام حکومتی امور نہیں مانتے ہیں۔

مذکورہ مطالب کے پیش نظر مندرجہ ذیل نتیجہ حاصل کیا جا سکتا ہے:

۱۔ ولایت فقیہ، ایک فقہی مسئلہ ہے، اگرچہ شیعوں کے اکثر اور قریب بہ اتفاق فقہا اس کا اعتراف کرتے ہیں، لیکن اسے اعتقادی اصول نہیں جانا جا سکتا ہے، کہ ہر شخص کو، اگرچہ مجتہد  و محقق ہو، اس کو قبول نہ کرنے کی صورت میں مکتب تشیع سے خارج کیا جائے۔

۲۔ جن افراد نے ولایت فقیہ کے نظریہ کو قبول کیا ہے اور جانتے ہیں کہ موجودہ ولی فقیہ بھی شرعی اور قانونی طریقہ کو طے کرنے کے بعد اس منصب پر فائز ہوا ہے، وہ اس کی عملی طاقت کی نافرمانی نہیں کر سکتے ہیں۔

۳۔ ضمناً جو مسلمان ولایت فقیہ کا اعتقاد نہیں رکھتے ہیں اور یہ اعتقاد رکھتے ہیں کہ ولی فقیہ کے عنوان سے معاشرہ کی سرپرستی کرنے والے شخص میں اس کی شرائط نہیں پائی جاتی ہیں اور غیر مسلم ہم وطن ، جو بنیادی طور پر اسلام کو ہی قبول نہیں کرتے ہیں اور اس کے احکام کی پابندی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ہے، وہ اس نظریہ کا اعتقاد نہ رکھنے یا مصداق پر مفہوم کے عدم تطبیق کی وجہ سے ، ولایت فقیہ کی عملاً مخالفت نہیں کر سکتے ہیں، کیونکہ اس قسم کی مخالفت، آئین کی مخالفت شمار ہوگی اور ہم جانتے ہیں کہ آئین ایک قومی میثاق ہے، اور اس کی رعایت کرنا ضروری ہے، اگرچہ وہ اس کے اصولوں کو نظریاتی طور پر قبول کرنے یا اس پر اعتراض کرنے والے ہوں

یہ بھی ملاحظہ ہو

imamat

امامت اور خلافت میں کیا فرق هے؟

مختصر جواب:۔ اگرچه اهل سنت کے بعض دانشمند مثلا ابن خلدون کی نظر میں امام …

پاسخ دهید

نشانی ایمیل شما منتشر نخواهد شد. بخش‌های موردنیاز علامت‌گذاری شده‌اند *