پنجشنبه , سپتامبر 19 2019
تازہ ترین
مرکزی صفحہ / کربلاء معلیٰ / حرمِ مقدس امامِ حُسین (ع)۔ / عاشوراء کے اصولوں کا ثمر عراق اور اسکے مقدسات کے دفاع کے فتوے پہ لبیک کی صورت میں برآمد ہوا(علامہ صافی)
Screen Shot 2016-10-17 at 9.38.39 PM

عاشوراء کے اصولوں کا ثمر عراق اور اسکے مقدسات کے دفاع کے فتوے پہ لبیک کی صورت میں برآمد ہوا(علامہ صافی)

سانحہ عاشوراء کے اثرات چودہ سو سالوں سے عراقی معاشرے پہ پڑ رہے ہیں اس سانحہ نے عراقی معاشرہ میں عقایدی، دینی، اجتماعی اور سیاسی حوالے سے تربیتی جڑیں بنا لی ہیں یہاں تک کہ قربانی و فداکاری سب عراقیوں کی زندگی کا جزو بن چکی ہے اور حیرت انگيز بات یہ ہے عراقی عیسائیوں اور صابئہ میں بھی واضح طور پر سانحہ عاشوراء کے آثار کو دیکھا جا سکتا ہے۔

ہم دیکھتے ہیں بہت سے افراد اس عظیم انقلاب سے نفسیاتی طور پر متاثر ہوئے اور انھوں نے اس قربانی، فداکاری اور کسی بھی جگہ ہونے والے ظلم وستم کے خلاف مذاہمت کرنے کے معانی کو الہامی طور پر حاصل کیا۔

یہی وجہ ہے کہ جس طرح سے عراقیوں نے اعلی دینی قیادت کی طرف سے دفاع کے فتوے پہ لبیک کہا ہے اس کی مثال پوری تاریخ میں شاذ ونادر ہی ملتی ہے۔ عوام کا اس فتوے پہ لبیک کہنا صدیوں سے ان میں عاشوراء کے اصولوں پہ پروان چڑھتا رہا ہے۔

ان خیالات کا اظہار نجف اشرف میں موجود اعلی دینی قیادت آیت اللہ العظمی سید علی سیستانی(دام ظلہ) کے خصوصی نمائندے اور روضہ مبارک حضرت عباس(ع) کے متولی شرعی علامہ سید احمد صافی نے 12محرّم 1438هـ کو نماز جمعہ کے دوسرے خطبے میں عسکری رضاکاروں کے بارے میں گفتگو کے دوران کیا۔

یہ بھی ملاحظہ ہو

c4af44d53c8f017f6eabefa61f6a6a79

قرآن مرکز کی جانب ’’أمير القرّاء الوطنيّ’’ پراجیکٹ کے تحت موسم گرما کی تعطیلات کے دوران پرائمری اور مڈل سکول کے بچوں کےلئے قرآن کورس کا انعقاد

روضہ مبارک حضرت عباس علیہ السلام کے قرآن مرکز کی جانب ’’أمير القرّاء الوطنيّ’’ پراجیکٹ …

پاسخ دهید

نشانی ایمیل شما منتشر نخواهد شد. بخش‌های موردنیاز علامت‌گذاری شده‌اند *