دوشنبه , سپتامبر 24 2018
مرکزی صفحہ / مشہد و قُمِ مقدس / حرمِ مقدس امام موسیٰ رضا (ع)۔ / شیخ نمرکی شہادت کی پہلی برسی حرم امام رضا میں برگزار کی گئ
5I5A0406

شیخ نمرکی شہادت کی پہلی برسی حرم امام رضا میں برگزار کی گئ

سعودیہ سے تعلق رکھنے والے مجاھد عالم دین شیخ نمر باقر النمر کی شہادت کی پہلی برسی آستان قدس رضوی کے متولی کی موجودگی میں حرم امام رضا علیہ السلام میں برگزار کی گئی۔
آستان نیوز کی رپورٹ کے مطابق؛ شیخ نمر باقر النمر کی شہادت کی مناسبت سے آستان قدس رضوی کے  ادارہ معاونت تبلیغات وارتباطات اسلامی کی طرف سے خصوصی پروگرام جو کہ نماز مغرب اور عشاء کے بعد رواق امام خمینیؒ میں برگزار ہوا۔
اس خصوصی پروگرام میں آستان قدس رضوی کے متولی کی موجودگی کے ساتھ ساتھ دینی علماء اور فضلاء اور آستان قدس رضوی اور صوبہ کے مسئولین نے بھی شرکت کی۔ امیر عارف کے توسط سے زیارت امین اللہ پڑھنے کے بعد شہید نمر کی روح کو خوشنود کرنے کے لئے انٹرنیشنل قاری قرآن حامد علیزادہ کے توسط سے کلام اللہ المجید کی چند آیات کی تلاوت کی گئی۔
اس ہروگرام میں حوزہ علمیہ خواف سے تعلق رکھنے والے طالب علم حجت الاسلام کشاورز اور سوریہ سے تعلق رکھنے والے اسماعیل کامل نے شیخ نمر کی مدح میں اور جنایتکار آل سعود کی مذمت میں شعر پڑھے۔
مجمع جھانی اھل بیت کے دبیر کل آیت اللہ اختری نے یمن ، سوریہ، عراق اور راہ حق کے تمام شھداء کو یاد کرتے ہوئے کہا: اس مجلس میں ایرانی اور غیر ایرانی زائرین کا یہ عظیم اجتماع جو کہ حرم مطہر ثامن الحجج میں تشکیل پایا اس بات کا گواہ ہے کہ تمام مسلمان آل سعود کے پراپوگنڈوں سے نفرت کرتے ہیں ۔
انہوں نے اس بات کی طرف اشارہ کیا کہ شیخ نمر نے بحرین کی مظلوم عوام کے حقوق کے دفاع کے لئے آل سعود کے خلاف مقاومت کی۔ انہوں نے کہا؛ شیخ نمر نے اپنی تقریروں سے اس وقت کی ظالم حکومت کو بے نقاب کیا اور آل سعود جو کہ اس انتقاد کو برداشت نہیں کر سکتا تھا شیخ نمر کو زندان میں ڈال دیا اور کچھ مدت کے بعد شہید کر دیا۔
مجمع جھانی اھل بیت (ع) کے دبیر کل نے کہا: اسلام کے دشمنوں کو یہ جان لینا چاہئے کہ علمائے دین اور اھل بیت علیھم السلام کے پیروکار خدا کے راستے میں شہید ہونے سے نہیں ڈرتے اور ہمیشہ سے دنیا کے مستکبروں اور بچوں کو قتل کرنے والے آل سعود کے مقابلے میں میدان جھات میں ڈٹے رہیں گے۔
آخر میں یہ بات قابل توجہ ہے؛  شیخ نمر باقر النمر ۲۰۱۲ جنوری کے مہینہ میں ان اعتراضات کی وجہ سے جو کہ ۲۰۱۱ میں فروری کے مہینہ میں سعودیہ کے شمال شرق میں واقع ایک شیعہ نشین علاقہ قطیف میں کئے جس کی وجہ سے گرفتار ہوئے اور ۱۵ اکتوبر ۲۰۱۵ میں سعودی کی عدالت میں بے بنیاد اتھامات کی وجہ سے تلوار کے ساتھ موت اور لوگوں کے سامنے پھانسی پر لٹکانے کی سزا سنائی گئی۔

یہ بھی ملاحظہ ہو

Untitled-1

ایرانی وزیر دفاع امیر حاتمی کی روضہ مبارک امام علی(ع) میں حاضری

ایران کے وزیر دفاع امیر حاتمی نے آج روضہ مبارک امام علی علیہ السلام میں …

پاسخ دهید

نشانی ایمیل شما منتشر نخواهد شد. بخش‌های موردنیاز علامت‌گذاری شده‌اند *