چهار شنبه , ژوئن 20 2018
مرکزی صفحہ / مشہد و قُمِ مقدس / حرمِ مقدس امام موسیٰ رضا (ع)۔ / امام رضا کے اسپتال میں دل اور اس کی رگوں کا علاج ترقی ترین روش کے ذریعہ انجام پا رہا ہے
o5iipw6o

امام رضا کے اسپتال میں دل اور اس کی رگوں کا علاج ترقی ترین روش کے ذریعہ انجام پا رہا ہے

رضوی ہاسپیٹل کے جنرل ڈائریکٹر نے خبر دی کہ رضوی ہاسپیٹل میں دل اور اس کی رگوں کا علاج ترقی ترین روش کے ذریعہ انجام پا رہا ہے ۔
آستا ن نیوز کی رپوٹ کے مطابق، ڈاکٹر قاسم سلطانی نے CTO کی تعلیم ورکشاپ کے دوران اور اس ہاسپیٹل میں ہونے والے آپریشن و سرجری کے متعلق کہا: رضوی ہاسپیٹل کی بطور کلی سیاست جدید ٹیکنالوجی کے ذریعہ مریضوں کی فلاح و بہبود میں خدمت کرنا ہے تاکہ لوگ دنیا کے ترقی یافتہ ترین امکانات سے بہرہ مند ہوسکیں۔
انہوں نے مزید کہا: اسی سلسلے میں ہمارا رابطہ یورپ کی میڈیکل یونیورسٹیوں سے ہے اور اٹلی و جرمنی کے ماہر ڈاکٹروں سے استفادہ کررہے ہیں اور ہم اس ہاسپیٹل میں سرجری کے جدید طریقے خصوصا دل کی سخت ترین مشکل و بیماری کا علاج کرتے ہیں۔ جن افراد کی سرجری ہونی ہے وہ ایسے افراد ہیں کہ جن کی وسیع پیمانے پر سرجری و آپریشن نہیں کیا جاسکتا ۔
ڈاکٹر سلطانی نے کہا: اس سرجری و آپریشن کے جدید طریقہ کے ذریعہ مریض بہت کم مدت کے لیے بے ہوش اور بہت ہی آسانی سے اپنی بیماری سے چھٹکارا حاصل کرلیتا ہے۔
انہوں نے رضوی ہاسپیٹل میں CTO کے ذریعہ آپریشن کے متعلق کہا: ہر تین یا چھ مہینے میں ایک مرتبہ وہ مریض کہ جو دل کی نص کے بند ہونے کا شکار ہیں اس تعلیمی ورکشاپ میں شرکت کرتے ہیں کہ جس میں ہمارے اپنے ماہر ڈاکٹروں کے علاوہ یورپ سے جیسے پروفیسر گالاسی تشریف لاتے ہیں کہ جو عصر حاضر میں یورپ کی CTOانجمن کے رئیس ہیں یہاں پر علاج ہوتا ہے کہ اب تک تین مرتبہ انجام پاچکا ہے ۔
ڈاکٹر سلطانی نے اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ دل کے کھلے آپریشن کی بنسبت ٹاوی آپریشن میں کم مشکلات ہیں کہا: ٹاوی روش کے ذریعہ رگوں اور نصوں کو کھولنا اگرچہ مالی لحاظ سے زیادہ خرچ رکھتا ہے  لیکن جن مریضوں کا پہلے دل کا کھلا ہوا آپریشن ہوچکا ہے وہ شگر کے مریض ہیں کہ جن میں دل کے کھلے آپریشن سے خطرات زیادہ ہیں لہذا ٹاوی روش بہت مناسب رہے گی۔
انہوں نے دل کے آپریشن کے سلسلے میں ہر روز کی ترقی کی طرف اشارہ کیا اور کہا: ٹاوی آپریشن میں کہ جو بند آپریشن پریس کے ذریعہ انجام پاتا ہے مریض کم سے کم بے ہوش اور بہت جلدی صحت یاب ہوجاتا ہے اس کے علاوہ بہت جلد اپنی اصلی حالت میں آجاتا ہے۔
انہوں نے رضوی ہاسپیٹل میں اب تک مرتبہ ٹاوی آپریشن انجام پانے کی طرف اشارہ کیا کہ میں اس آپریشن کی ذمہ داری اٹھائے ہوئے تھا خصوصا ٹاول آپریشن میں بے ہوشی کے متعلق کہا: دل کا آپریشن حقیقت میں بیہوشی پر ہی موقوف ہے اور اس طرح کہ آپریشن کے وقت دل بھی حرکت میں رہے۔ ٹاوی روش کے ذریعہ آپریشن بہت ہی دقت کے ساتھ انجام پاتا ہے  اس لیے کہ بلڈ پریشر نیچے آجاتا ہے اور دماغ و گردوں پر اثر انداز ہوتا ہے اور اگر پریشر اوپر پنہچ جائے تو دل پر اثر انداز ہوتا ہے اور پھر ممکن ہے کہ خون اپنی اصلی حالت پر نہ سکے۔
انہوں نے مزید کہا: بیہوشی ٹیم کو بہت ہی دقت کی ضرورت ہے کہ وہ بیہوشی کے وقت دواؤں کے ذریعہ کنٹرول رکھے، اور جہاں خون زیادہ بہہ گیا ہو وہاں پر ضروری اقدامات انجام دے۔ نیز  یہ بھی کہ اس طرح کے آپریشن کبھی بھی ممکن ہے کہ کھلے ہوئے آپریشن میں تبدیل کرنا پڑے  لہذا ہر طرح سے حساسیت کا حامل ہے۔

یہ بھی ملاحظہ ہو

aaa

پاکستانی قومی اسمبلی کے نمائندوں کا ایک وفد حرم امام رضا میں زیارت کے لئے حاضر ہوا

پاکستان کی پارلیمنٹ کے چند ایک اراکین کا ایک وفد حرم امام رضا(ع) میں زیارت …

پاسخ دهید

نشانی ایمیل شما منتشر نخواهد شد. بخش‌های موردنیاز علامت‌گذاری شده‌اند *