جمعه , دسامبر 6 2019
تازہ ترین
مرکزی صفحہ / کربلاء معلیٰ / حرمِ مقدس مولا عباس (ع)۔ / ریلیف اینڈ سپورٹ ڈویژن کی کارکردگی کا جائزہ لینے اور مستقبل میں لائحہ عمل طے کرنے کے لئے اعلی سطحی اجلاس کا انعقاد
01a898e164f6b703bfa7aa4be11e1d82

ریلیف اینڈ سپورٹ ڈویژن کی کارکردگی کا جائزہ لینے اور مستقبل میں لائحہ عمل طے کرنے کے لئے اعلی سطحی اجلاس کا انعقاد

روضہ مبارک حضرت عباس علیہ السلام کی ریلیف اینڈ سپورٹ ڈویژن کی کارکردگی کا جائزہ لینے اور مستقبل میں لائحہ عمل طے کرنے کے لئے اعلی سطحی اجلاس کا انعقاد کیا گیا۔ اس اجلاس میں ریلیف اینڈ سپورٹ ڈویژن کی اعلی قیادت اور ضلعی یونٹس کے سربراہان نے شرکت کی۔

اس اجلاس کے انعقاد کا مقصد ڈویژن کی کارکردگی کا جائزہ لینا اور اور ڈویژن کی جانب سے جاری مختلف منصوبوں پر مشاورت کرنا تھا۔ ان منصوبوں میں سیکورٹی فورسز اور پاپولر موبلائزیشن کی لاجسٹک سپورٹ پروجیکٹس اور انسانی ہمدردی کی بنیاد پر شروع کیے گئے رفاہی منصوبےخصوصی طور پر زیر غور لائے گئے۔

شیخ عباس العکایشی کے زیر صدارت ہونے والے اجلاس کے دوران لاجسٹک سپورٹ اور امدادی کارروائیوں کےضمن میں تمام ذیلی یونٹس کی کارکردگی اور کام کو بے حد سراہا گیا۔ اس اہم اجلاس میں ڈویژن اور اسکی ضلعی یونٹس کے لئے مستقبل کا لائحہ عمل طے کرنے کے حوالے سے بھی اہم فیصلے کیے گئے۔

ڈویژن کی جانب سے اجلاس کے دوران صوبہ المثنی اور سماوی میں امدادی کاروائیاں شروع کرنے کے لئے تاریخوں کا اعلان بھی کیا گیا۔ شہدائے وطن اور اس مقدس جنگ کے دوران زخمی ہونے والے غازیوں کے خاندانوں اور بچوں کی معاشی اورسماجی بحالی اور مدد کے لئے مہم چلانے کا اعلان بھی کیا گیا۔

واضح رہے کہ ریلیف اینڈ سپورٹ ڈویژن روضہ مبارک حضرت عباس علیہ السلام کا انتہائی سرگرم ذیلی ادارہ ہے اور یہ عراق میں سکیورٹی اور سروسز کی مختلف ذمہ داریاں اٹھانے کے ساتھ ساتھ انسانی ہمدردی کی بنیاد پر مختلف امدادی کاروائیاں بھی سرانجام دیتا ہے جیسے کہ داعش کی جنگ کے دوران بے گھر ہونے والے خاندانوں کی بحالی اور آبادکاری، قدرتی آفات سے متاثرہ افراد اور علاقوں میں امدادی اور بحالی سرگرمیاں، سکیورٹی فورسز کو لاجسٹک سپورٹ کی فراہمی، جنگ کے دوران شہداء اور زخمیوں کے خاندانوں کی معاشی اور سماجی مدد وغیرہ۔

یہ بھی ملاحظہ ہو

An Iraqi Shi'ite Muslim boy kisses a poster of the Ayatollah Ali al-Sistani in the town of Karbala, some 110 km south from the Iraqi capital Baghdad, early February 6, 2004. Iraq's most powerful Shi'ite cleric, Ayatollah Ali al-Sistani, survived an assassination bid on Thursday when gunmen opened fire on his entourage in the sacred streets of Najaf, a security aide said. The assassination attempt comes days before a team of United Nations electoral experts is due to arrive in the country to assess the feasibility of holding early elections along the lines that Sistani has demanded. REUTERS/Ali Jasim  PP04020063 OP/CRB - RTRC0XD

آیت‌الله سیستانی کا عراق میں حالیہ مظاہروں کے حوالے سے تحقیقات کا مطالبہ

نامور مرجع تقلید نے اعلی حکام سے مطالبہ کیا کہ حالیہ مظاہروں اور ذمہ داروں …

پاسخ دهید

نشانی ایمیل شما منتشر نخواهد شد. بخش‌های موردنیاز علامت‌گذاری شده‌اند *